QuestionsCategory: بدعات ورسوماتعید میلاد النبی کی شرعی حیثیت
Zia asked 2 years ago

عید میلاد النبی کی شرعی حیثیت کیا اسلام میں یہ عید منانا جائز ہے یا صحابہ کرام رضوان اللہ علیہم اجمعین کی زندگیوں سے ثابت ہے؟

نوٹ۔ کوئی ایسے سوالات بھی لکھ دیں جو ہم ایسی عید منانے والے حضرات سے پوچھ سکیں۔

2 Answers
Mufti Shahid Iqbal answered 2 years ago

الجواب
اس بات میں کوئی شک نہیں کہ ذکرِ مصطفیٰ  صلی اللہ علیہ وسلم ہزاروں برکتوں کا حامل ہے ۔جبکہ اس میں ولادت ،معجزات اور غزوات کا ذکر بطرز  وعظ ودرس بغیر کسی پابندیِ رسومات کے کرے ۔مگر اس زمانہ میں محفل میلادمندرجہ ذیل وجوہ کے باعث  جائز نہیں۔
۱۔حضور صلی اللہ علیہ وسلم کے متعلق یہ عقیدہ ہوتا ہے کہ آپ  اس محفل میں تشریف لاتے ہیں جو کہ صحیح نہیں۔
۲۔محفل میلاد میں شیرینی وغیرہ  کو ضروری سمجھا جاتاہے اور خاص  کر محفل ِ میلاد کو واجب کا درجہ دیاجاتا ہے    جب کسی جائز کام  کولوگ ضروری سمجھنے لگیں تو وہ کام مکروہ ہوجاتاہےجیساکہ امام محمد ابن عابدین شامی رحمۃاللہ علیہ نے فتاویٰ شامیہ میں فرمایا
                                    کل مباح یودی الیہ [الی الوجوب]مکروہ    ۔                             فتاویٰ شامیہ
۳۔کسی مہینے اورمقرہ تاریخ پے میلاد کرنے کو ضروری خیال کیا جاتاہے جبکہ شریعت  نے کوئی خاص  مہینہ یا تاریخ معین نہیں کی۔اس کے علاوہ اور بھی بہت سی وجوحات ہیں۔
جبکہ اھل السنۃ والجماعۃ  کا موقف یہ ہے کہ مروجہ عیدمیلاد البنی  کاثبوت نہ قرآن میں ہے اور نہ حدیث میں بلکہ اس کی ابتداء تو چوتھی صدی  ہجری میں ہوئی جوکہ سب سے پہلے مصر میں نام نہاد فاطمی شیعوں نے یہ جشن منایا۔
                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                   الخطط للمقریزی                 ص490
اور بقاعدہ جلوس  اور محفل کی صورت میں اس کی ابتداء چھٹی صدی میں ہوئی۔جیساکہ مشہوربریلوی عالم جناب عبد السمیع رامپوری صاحب لکھتے ہیں
یہ ساما ن فرحت وسرورکرناور  اس  کو بھی ربیع الاول کے مہینہ کے ساتھ مخصوص  کرنااور اس میں بھی میلاد شریف کےلئے خاص وہی بارہواں دن معین کرنابعد میں ہوا یعنی چھٹی صدی کے آخر میں۔
                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                انوار ساطعہ ص194
اور مروجہ عید میلادالنبی بدعت ہےکیونکہ بدعت کہتے ہیں ہر ایسا کام جو خیرالقرون میں نہ ہو اور اس کو دین سمجھ کر کیاجائے۔جیسا کہ جناب مفتی احمد یار خان نعیمی صاحب  نے جاء الحق میں امام سخاوی رحمۃ للہ علیہ کا قول نقل کرتے  ہیں۔
لم یفعلہ احد من القرون الثلاثہ انماحدث بعد۔
                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                    جاءالحق ج1 ص226
ترجمۃ=میلاد شریف  کو آپ صلی اللہ علیہ وسلم ،صحابہ اور تابعین کے زمانے  میں کسی نے نہ کیا بعد کی ایجاد ہے۔
۲۔اور نبی علیہ السلام کے یوم ولادت کو عید قرار دیناعیسائیوں کاوطیرہ ہے۔مروجہ عید میلاد النبی صلی اللہ علیہ وسلم ،         عید میلاد عیسیٰ علیہ السلام کے مشابہ ہےجو کہ بدعت سئیہ ہے  اور کفار کی مشابہت اختیار کرنا اور ان کی رسومات پر عمل کرنے سے منع کیا گیا ہے۔
امام ابو اسحاق شاطبی رحمۃ اللہ علیہ نے بدعات کاذکر کرتے ہوئے لکھتے ہیں
کالذکربھیئۃ الاجتماع علیٰ صوت واحد واتخاذ ہوم ولادۃ النبی صلی اللہ ولیہ وسلم عیدا۔
                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                           الاعتصام ج1 ص39
اور حضرت مجدد الف ثانی رحمۃاللہ علیہ فرماتے ہیں۔
میرے محترم’میں سمجھتاہوں جب تک اس قسم کی محفل میلاد کا دروازہ بند نہ کیاجائے ہوس پرست باز نہ آئیں گے۔
                                                                                                                                                                                                                                                        مکتوبات ج1 حصہ 5 ص22 مکتوب نمبر273
واللہ اعلم بالصواب
دارافتاء
مرکز اھل السنۃوالجماعۃ
سرگودھا پاکستان
تاریخ 25/11/2018 ء

Mufti Shahid Iqbal answered 2 years ago

الجواب
اس بات میں کوئی شک نہیں کہ ذکرِ مصطفیٰ  صلی اللہ علیہ وسلم ہزاروں برکتوں کا حامل ہے ۔جبکہ اس میں ولادت ،معجزات اور غزوات کا ذکر بطرز  وعظ ودرس بغیر کسی پابندیِ رسومات کے کرے ۔مگر اس زمانہ میں محفل میلادمندرجہ ذیل وجوہ کے باعث  جائز نہیں۔
۱۔حضور صلی اللہ علیہ وسلم کے متعلق یہ عقیدہ ہوتا ہے کہ آپ  اس محفل میں تشریف لاتے ہیں جو کہ صحیح نہیں۔
۲۔محفل میلاد میں شیرینی وغیرہ  کو ضروری سمجھا جاتاہے اور خاص  کر محفل ِ میلاد کو واجب کا درجہ دیاجاتا ہے    جب کسی جائز کام  کولوگ ضروری سمجھنے لگیں تو وہ کام مکروہ ہوجاتاہےجیساکہ امام محمد ابن عابدین شامی رحمۃاللہ علیہ نے فتاویٰ شامیہ میں فرمایا
                                    کل مباح یودی الیہ [الی الوجوب]مکروہ    ۔                             فتاویٰ شامیہ
۳۔کسی مہینے اورمقرہ تاریخ پے میلاد کرنے کو ضروری خیال کیا جاتاہے جبکہ شریعت  نے کوئی خاص  مہینہ یا تاریخ معین نہیں کی۔اس کے علاوہ اور بھی بہت سی وجوحات ہیں۔
جبکہ اھل السنۃ والجماعۃ  کا موقف یہ ہے کہ مروجہ عیدمیلاد البنی  کاثبوت نہ قرآن میں ہے اور نہ حدیث میں بلکہ اس کی ابتداء تو چوتھی صدی  ہجری میں ہوئی جوکہ سب سے پہلے مصر میں نام نہاد فاطمی شیعوں نے یہ جشن منایا۔
                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                   الخطط للمقریزی                 ص490
اور بقاعدہ جلوس  اور محفل کی صورت میں اس کی ابتداء چھٹی صدی میں ہوئی۔جیساکہ مشہوربریلوی عالم جناب عبد السمیع رامپوری صاحب لکھتے ہیں
یہ ساما ن فرحت وسرورکرناور  اس  کو بھی ربیع الاول کے مہینہ کے ساتھ مخصوص  کرنااور اس میں بھی میلاد شریف کےلئے خاص وہی بارہواں دن معین کرنابعد میں ہوا یعنی چھٹی صدی کے آخر میں۔
                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                انوار ساطعہ ص194
اور مروجہ عید میلادالنبی بدعت ہےکیونکہ بدعت کہتے ہیں ہر ایسا کام جو خیرالقرون میں نہ ہو اور اس کو دین سمجھ کر کیاجائے۔جیسا کہ جناب مفتی احمد یار خان نعیمی صاحب  نے جاء الحق میں امام سخاوی رحمۃ للہ علیہ کا قول نقل کرتے  ہیں۔
لم یفعلہ احد من القرون الثلاثہ انماحدث بعد۔
                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                    جاءالحق ج1 ص226
ترجمۃ=میلاد شریف  کو آپ صلی اللہ علیہ وسلم ،صحابہ اور تابعین کے زمانے  میں کسی نے نہ کیا بعد کی ایجاد ہے۔
۲۔اور نبی علیہ السلام کے یوم ولادت کو عید قرار دیناعیسائیوں کاوطیرہ ہے۔مروجہ عید میلاد النبی صلی اللہ علیہ وسلم ،         عید میلاد عیسیٰ علیہ السلام کے مشابہ ہےجو کہ بدعت سئیہ ہے  اور کفار کی مشابہت اختیار کرنا اور ان کی رسومات پر عمل کرنے سے منع کیا گیا ہے۔
امام ابو اسحاق شاطبی رحمۃ اللہ علیہ نے بدعات کاذکر کرتے ہوئے لکھتے ہیں
کالذکربھیئۃ الاجتماع علیٰ صوت واحد واتخاذ ہوم ولادۃ النبی صلی اللہ ولیہ وسلم عیدا۔
                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                           الاعتصام ج1 ص39
اور حضرت مجدد الف ثانی رحمۃاللہ علیہ فرماتے ہیں۔
میرے محترم’میں سمجھتاہوں جب تک اس قسم کی محفل میلاد کا دروازہ بند نہ کیاجائے ہوس پرست باز نہ آئیں گے۔
                                                                                                                                                                                                                                                        مکتوبات ج1 حصہ 5 ص22 مکتوب نمبر273
واللہ اعلم بالصواب
دارافتاء
مرکز اھل السنۃوالجماعۃ
سرگودھا پاکستان
تاریخ 25/11/2018 ء